شہر قائرہ

دانشوران کو قاہ نظروں کا کہنا ہے
کہ مصر کے عوام عنور
طرز شاہی سے تنگ آکر
غیض غضب کی علامت ہو گئے ہیں
ان بونے دانشوروں کو میرا پیام دے دو
کہ شہر قائرہ کی عظیم سڑکوں پر
جو بھی منظر ہے اسے غور سے دیکھو
گر تمہاری نظر میں وہ نظر نہیں ہے
کچھ دیر کوہی سہی ہماری نظر سے دیکھو
اور غور سے سنو وہ ان کی صدا
اگر کان رکھتے ہو
کہ ان کی صداؤں میں صدا ہے
مہنگائی کے خلاف
کہ ان کی نظر میں بغاوت افلاس صاف ہے
سنو کہ شہر قائرہ کی رزم گاہوں میں
دو مختلف طبقے ہیں باہم ستیزہ کار
بازو چھڑا کے قحط و افلاس کے ہاتھوں
زمانے کے زردار کو للکار رہے ہیں
سماج کو بدلنے کی تمنا لئے ہوئے
دنیا کے مزدور کو پکار رہے ہیں

ذولفقار عادل کشمیری

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: