رستم و سہراب کے محنت کشوں کا اپنے مطالبات حق میں ریلی

رستم سہراب فیکٹری کے محنت کشوں نے شاہدرہ سے پریس کلب تک تنخواہوں میں اضافے ،نوکریوں میں برطرفیوں کے خلاف اور یونین ریفرینڈم کے لیے ایمپلائیزاور لیبر یونین کے زیر اہتمام ریلی نکالی،جس میں بڑی تعداد میں محنت کش شریک ہوئے،جو سرخ پرچم لہراتے ہوئے انتظامیہ اور حکومت کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔
ایمپلائز یونین کے صدر سجاد حسین نے ریلی کے خاتمے پر مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے کہا،مہنگائی روز برروز بڑھ رہی ہے ان حالات میں محنت کشوں کی زندگی اجیرن ہوگی ہے ،وہ اپنی زندگی کی بنیادی ضروریات پورا کرنے سے قاصرہیں ، غریب لوگ خودکشی کر رہے ہیں۔ جبکہ سرمایہ دار وں کی دولت میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے اور وہ عیاشی کی زندگی بسر کر رہے ہیں، انتظامیہ محنت کشوں کی مراعات چھین رہی ہے اور یونین کے الیکشن پچھلے ڈیڑھ سال سے نہیں ہونے دے رہی۔یہ مسئلہ کورٹ میں ہے لیکن وہ اس پر کوئی فیصلہ نہیں دیرہی،ہم نے کورٹ سے برطرفیوں کے خلاف سٹے آڈر لے رکھا، لیکن اس کے باوجود انتظامیہ آڈر کی دھجیاں بکھیر رہے ہے۔محنت کش کورٹ میں ہیں لیکن کورٹ اس مسئلہ پر کوئی فیصلہ نہیں دئے رہی۔
انہوں نے کہہ حکومت نے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ کردیا گیالیکن صنعتی مزدور شاید انسان نہیں ہیں اس لیے ان کی تنخواہوں میں کوئی اضافہ نہیں کیا گیا۔ہم مطالبہ کرتے ہیں محنت کشوں کی تنخواہوں میں 50%اضافہ کیا جائے۔
ہم اپنے مطالبات کی منظوری تک جدوجہد جاری رکھیں گے۔محنت کش حکومت اور انتظامیہ کے خلاف شدید نعرے بازی کررہے تھے۔مزاحمت سے بات کرتے ہوئے بھٹی نے کہا’’مالکان ہماری محنت سے بڑے منافعے بنا رہے ہیں،یہ صرف ان کے کاروبار کی ترقی کی صورت میں ہی نظر نہیں آرہی،بلکہ ان کی زندگی کی آسائشوں سے بھرپور ہوگی ہے۔وہ روز نئی گاریاں خرید رہے ہیں ،جبکہ ہم بھوک کا شکار ہیں،اس نے مزید کہہ کہ ہم محنت کش شدید غصے میں ہیں اور وہ اپنے مطالبات کی منظور تک جدوجہد جاری رکھیں گیص

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: