سرمایہ داری کے خلاف بغاوت

سوشلسٹ انقلاب تک ناقابل مصالحت جدوجہد

جدوجہد کا آغاز:
بجلی کی طویل لودشیڈنگ کی وجہ سے پنجاب کے مختلف شہروں میں بڑے پیمانے پر مظاہرے ہورہے ہیں۔جس میں جلاؤ گھیراؤ کے ساتھ مختلف سڑکوں کو بھی احتجاجیوں نے بند کردیا.لاہور،فیصل آباد،گجرانوالہ،ملتان،اوکاڑہ ، اور راولپنڈی میں شدید احتجاجات برپا ہوئے۔جن پر پولیس نے وحشیانہ تشدد،گرفتاریاں،مقدمات بھی درج کیے،لیکن احتجاج کم ہونے کی بجائے شدت اختیار کرتاجارہاہے۔
حکمران طبقہ میں تقسیم:
حکمران طبقہ اس وقت تقسیم ہے۔عوامی احتجاجات کی شدت کو محسوس کرتے ہوئے،اس میں تحریک انصاف، جماعت اسلامی اور دیگر دائیں بازو کی جماعتیں شامل ہوگئیں۔نواز لیگ نے بھی پنجاب کے ساتھ زیادتی کے نام پر احتجاج میں شمولیت کا اعلان کردیااور اپنے کارکنان کو اس میں شمولیت اور اس کو منظم کرنے کا کہا۔احتجاج کامرکز مرکزی پنجاب ہے۔دائیں بازو کی پارٹیوں کی اس تحریک میں شمولیت کی ایک وجہ کاروباری طبقے میں بے چینی اور احتجاج ہے ۔اس کے ساتھ وہ عوامی تحریک کے ذریعے موجودہ حکومت کا خاتمہ چاہتے ہیں،تاکہ وہ اقتدار میں آسکیں۔ان تمام جماعتوں کی طرف سے کرپشن کے خاتمے اور اداروں کے استحکام کا مطلب موجود نظام کا تحفظ اور عوام کا اس پر اعتماد بحال کرناہے۔
سرمایہ داری کی ناکامی:
سرمایہ داری نظام طبقاتی نظام ہے جس میں معیشت کے مرکزپردو بنیادی طبقات ہیں ایک طرف سرمایہ دار اور دوسری طرف محنت کش اس نظام میں تمام دولت محنت کش پیدا کرتے ہیں اور سرمایہ دار ان کی محنت کا استحصال کر کے’’ منافع ‘‘حاصل کرتے ہیں ۔یہ منڈی کا نظام ہے جہاں تعلیم،صحت،بجلی ،گیس پانی سمیت بنیادی ضروریات کی تمام چیزیں خریدنی پڑتی ہیں یہ ایسا نظام ہے جہاں محنت کش تمام تر پیداوار کرتے ہیں ۔لیکن وہی بنیادی ضروریات سے محروم رہتے ہیں یہ سرمایہ دار طبقے کا نظام ہے ،موجودہ حکومت اور ریاست اسی طبقے کی نمائندہ ہے ۔بجلی کی طویل لوڈ شیڈنگ سے جنم لینے والا احتجاج اس نظام کا پر عدم اعتماد ہے ۔جدوجہد میں وہ تمام لوگ آرہے ہیں جن کو یہ نظام محروم کرتا ہے اور جو اس میں اپنا مستقبل نہیں دیکھتے ۔مہنگائی،بیروزگاری،غربت،کراچی میں سیاسی جماعتوں کا قتل عام بلوچستان اور پختونخواہ میں آپریشن اور رجعت پسندی سیلاب کی تباہی اور اس سے حکمران طبقہ کا منافع اور دولت میں اضافہ عوام میں شدید نفرت اور غصے کو جنم دے رہا ہے یہ نظام مکمل طور پر ناکام ہو گیا ہے ۔
حکمران طبقے کی جماعتیں:
حکمران طبقہ موجودہ نظام کو بچانا چاہتا ہے کہ اس میں ان سب کا فائدہ ہے لیکن نوجوان محنت کش ،شہری اور دیہی غریب احتجاج میں آرہے ہیں یہ پولیس اور دیگر اداروں سے ٹکراؤ میں آرہے ہیں ۔حکمران طبقہ خوفزدہ ہے اور جبر اور اصلاحات کے زریعے تحریک کا خاتمہ یا اس پر کنٹرول چاہتا ہے۔جبکہ دائیں بازو کی رجعت پسند جماعتیں اس کو سماج میں رجعت کے ابھارکے لیے استعمال کرناچاہتی ہیں۔ ان تمام کا حل عوام کے لئے نہیں بلکہ سرمایہ دار اقلیت کے لئے ہیں۔
تبدیلی کی جدوجہد:
عوامی تحریک کو منظم اور وسیع کرنے کی ضرورت ہے ،عوام نے سڑکوں پر آکر جدوجہد اور لڑنے کی گہری خواہش کو ظاہر کیا ہے ۔موجود تحریک کو پرتشدد بنانے،جلاؤ گھیراؤ اور لوٹ مار کر نے والوں کو روکنا ہوگا۔مگرتحریک پر حکمران طبقہ کے حملوں کو روکنے کے لیے دفاعی کمٹیں بنانا ہوں گئیں۔عوام لوڈشیڈنگ کا خاتمہ اور سماجی انصاف چاہتے ہیں یعنی روزگار،تعلیم ،صحت،روٹی کپڑا،مکان اور صاف ماحول ، اس کے لئے سرمایہ داری نظام اور حکمران طبقے کے خلاف جدوجہد کی ضرورت ہے ۔مشرق وسطی میں جاری انقلاب نے ثابت کیا ہے کہ جدوجہد سے حکمران طبقے کو شکست دی جا سکتی ہے عوام متحد ہوں تو جیت سکتے ہیں ٹریڈ یونینز اور کسان تنظیموں اور ان کے ارکان کوانقلابی جدوجہد پر مبنی محنت کش عوام کی پارٹی تعمیر کرناہوگی جو نا صرف حکمران طبقے کے جبر کا مقابلہ کرے بلکہ اس کی اصلاح پسندی کو بھی واضح کرتے ہوئے سوشلسٹ سماج کے قیام تک جدوجہد جاری رکھے۔

مطالبات
بجلی کی لوڈ شیڈنگ کا فوری خاتمہ
پاور کمپنیوں کی نجکاری نامنظور
تیل،بجلی،اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ نامنظور
کے ای ایس ی ، پی ٹی سی ایل اور یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسزکے برطرف ملازمین کو بحال کیا جائے۔
ملٹی نیشنل کمپنیز،رئیل اسٹیٹ،اسٹاک بروکر اور سرمایہ داروں پر ٹیکس عائد کئے جائیں ,تاکہ ریلوے،واپڈا،پی آئی اے کے بجٹ میں اضافہ کیا جاسکے ،اس کے علاوہ بڑے پیمانے پر پبلک ورکس پروگرام شروع کیا جائے جس میں بے روزگاروں کو نوکریاں فراہم کی جائیں۔
حکمرانوں،سول و ملٹری بیروکریٹس کی تنخواہوں اور مراعات میں کٹوتیاں کی جائیں ۔
مفت،تعلیم ،صحت ،روزگار فراہم کیا جائے ۔
سامراجی جنگ اور ریاستی آپریشنز بند کئے جائے ۔

انقلابی سوشلسٹ موومنٹ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: